admin Uncategorized August 18, 2020

The increase in the prices of petroleum products should be withdrawn.

The working class should wage struggle against the IMF and Anti People government and Mafias.

(Labor leaders demanded at the protest rally in Karachi)

KARACHI (Press Release) July 3rd: Rising petrol prices, forced retrenchment of workers, power, and water shortages prove that the country was under the complete control of the anti-people mafias and a full-fledged people’s movement is needed to defeat them.

These views were expressed at a rally organized by National Trade Union Federation Pakistan (NTUF), Home Based Women Workers Federation (HBWWF), and other organizations at Karachi Press Club. The protest was organized on the call of the NTUF and Haqooq-e-Khalq Movement. Hundreds of workers as well as representatives of political and social organizations and women workers took part in the protest

.

 

Addressing the protest rally, Nasir Mansoor, secretary-general of the National Trade Union Federation Pakistan (NTUF) said that even before the annual budget was passed, the government had imposed a mini-budget on the people prepared by the mafia and economic hitmen of IMF. The government had robbed the pockets of the people by increasing the prices of petroleum products by 25 to 60 percent in a criminal manner while keeping the legal system in abeyance. The petroleum mafia in the government had made billions of rupees overnight. It had created a storm of rising inflation. The petroleum mafia got courage to do it because the sugar and flour mafia which also earned billions of rupees through illegal means went scot-free.

He added that on one hand, the government had left 220 million people at the mercy of the deadly coronavirus due to its reckless policies while on the other hand, the health workers who were fighting against the deadly epidemic were helpless. Many doctors, nurses, and paramedics had died as a result of the government’s apathy towards the health sector. Evidence of the government’s anti-people sentiment was that it had not only neglected health and education sectors in the current budget but also not increasing the salaries and wages of workers and employees which had pushed millions of people into further poverty and destitution.

Zahra Khan, general secretary of the Home-Based Women Workers Federation (HBWWF), said that the country was already suffering from the worst economic crisis as a result of IMF-led policies, but the incompetent government had exacerbated the crisis with its actions. ۔ More than six million workers have lost their jobs in the last six months, while it is feared that more than 18 million workers will lose their jobs in the coming days. The situation was that more than fifty percent of the country’s population was forced to live below the poverty line.

She stressed that most of the families of the workers were suffering from malnutrition and starvation while the government, despite all the claims, had completely failed to provide timely and immediate assistance to the workers affected by the epidemic.

Comrade Khaliq Zadran, Convener of Lyari Awami Mahaz, while expressing his views, said that the power crisis in the country is getting worse. The citizens of a developed city like Karachi suffer from mental and physical suffering due to 12 to 14 hours of load shedding. Despite seventy years of independence, the citizens of the country’s largest city were deprived of basic necessities like water. Nowadays, the whole of Karachi was protesting due to the non-supply of water and electricity. The government has left the citizens of Karachi at the mercy of the K- Electric and water mafia.

Usman Baloch, the labour leader said that the hypocritical behavior of the government can be gauged from the fact that on the one hand the government was opposed to lockdown to save the jobs of the workers while on the other hand, it has privatized more than forty-three institutions to make millions of workers jobless. The government had withdrawn state subsidies, imposing more economic burdens on the people at the behest of the IMF. The government was conspiring to transfer the trillions of rupees owed to the power generating companies to the people through a parliamentary bill.

Other Labor leaders added that at a time when all opposition parties were miserably failed to protect people’s rights, it had become imperative for the working people and the conscious section of society to wage a full-fledged struggle against the incompetent government which works for IMF and powerful mafias.

They demanded that
an increase in petroleum prices should be withdrawn and the mafia involved in this crime should be brought to justice.

The salaries and pensions of the workers should be increased in proportion to inflation.

All fired workers, including steel mill workers, should be reinstated.

The decision to privatize 43 public institutions should be withdrawn.

K- Electric had failed to provide basic facilities to the people and its control should be handed over to the city or provincial government with immediate effect.

Water projects for Karachi should be completed immediately. All hydrants should be shut down and citizens should be freed from the clutches of the water tanker mafia.

Together with other countries, refuse to repay all foreign debts and the amount should be spent on peoples welfare schemes.

Provide social protection to all citizens under the Universal Social Security System.

In addition to safety gear, training should be provided to medical staff on an emergency basis and their salaries should be increased by 100 percent.

Among those who addressed the protest were Gul Rehman, President of National Trade Union Federation Sindh, Comrade Abdul Rehman Baloch, president Shahmir welfare Trust, Aqib Hussain, Leader of J&P Quotes Union, Gul Bakht Shah of Assist Employees Union, Saira Feroz, General Secretary of United HB Garment Workers Union, Saeeda Khatoon, Chairperson Ali Enterprises Factory Fire Affecttees Association. Leader, Wasim Jameel of SESSI officers Association, Faran Ali General Secretary of Rauf Textile, Himmat Ali, leader of Karachi Sindh Sujag Mazdoor Federation, Kulsoom Baloch of Student Action Committee, Saeed Baloch of Pakistan Fisher Folk Forum, Dr. Asghar Dhasti, Basit Jagrani, Organizer of Garment Textile General Workers Union Korangi, Barak Zaidi of Lyari Awami Mahaz.

پیٹرولیم مصنوعا ت کی قیمتوں میں اضافہ واپس لیا جائے جبری بھرطرفیا ں ختم کی جائے، شہریوں کو بجلی اور پانی فراہم کیا جائے۔

محنت کش عوام اور سماج کے با شعور افراد آئی ایم ایف اور مافیا پر مشتمل اس حکومت کے خاتمہ کے لیے بھر پور جدوجہد کا آغاز کرے۔ احتجاجی مظاہرے سے مزدور رہنماوں کا خطاب

کراچی (پ۔ ر) پیٹرول کی قیمت میں اضافہ، جبری برطرفیاں ، بجلی اور پانی کی عدم فراہمی ثابت کرتیں ہیں کہ ملک پر عوام دشمن مافیا کا مکمل کنٹرول ہے اور انہیں شکست دینے کے لیے ایک بھر پور عوامی تحریک وقت کی اہم ضرورت ہے ۔ ان خیالات کا اظہارنیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن م، ہوم بیسڈ وومن ورکرز فیڈریشن اور دیگر تنظیموں کے زیر اہتمام کراچی پریس کلب پر منعقدہ ریلی میں کیا گیا ۔

یہ احتجاج نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن اور حقوق خلق موومنٹ کی ملک گیر احتجاج اپیل پر منعقد کیا گیا ۔اس احتجاجی مظاہرے میں سینکڑوں کی تعداد میں مزدوروں کے علاوہ سیاسی و سماجی تنظیموں کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔

احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن کے جنرل سیکرٹری ناصر منصور نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نئے سال کابجٹ پاس ہونے سے پہلے ہی حکومت نے مافیا کا تیار کردہ منی بجٹ عوام پر مسلط کر دیا ہے جس کے نتیجے میں مہنگائی کا طوفان اٹھ کھڑا ہوا ہے ۔ حکومت نے قانونی طریقہ کار کو بلاطاق رکھتے ہوئے مجرمانہ انداز میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں پچیس سے ساٹھ فیصد اضافہ کرکے عوام کی جیبوں پر ڈاکہ مارا ہے ۔حکومت میں بیٹھی مافیا نے راتوں رات اربوں روپے کا منافع کمایا ہے ۔چینی آٹا مافیا کی لوٹ مار کے بعد اب پیٹرولیم مافیا حکومتی پش پناہی سے عوام سے تین سو ارب سے زائد کا بھتہ وصول کیا ہے۔

انہو ں نے مزید کہا کہ جہاں ایک طرف حکومت نے اپنی نا عاقبت اندیشن پالیسیوں کی وجہ سے بائیس کروڑ انسانوں کو جان لیواکرونا وائرس کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے وہاں دوسری طرف اس موذی وبا کے خلاف لڑنے والے صحت کے محافظوں کو بغیر ساز و سامان اور حفاظتی اقدامات کے موت کے منہ میں دھکیل دیا ہے ۔اسی انسان دشمن پالیسی کی وجہ سے کئی ایک ڈاکٹرز ، نسرسسزاور پیرا میڈیکل اسٹاف جان بحق ہو چکے ہیں ۔ حکومت کی عوام دشمنی کا ثبوت یہ بھی ہے کہ اس نے موجودہ بجٹ میں صحت اور تعلیم کو مکمل طور پر نظر انداز کر دیا ہے ۔ جبکہ محنت کشوں اور ملازمین کی تنخواہوں اور اجرتوں میںاضافہ نہ کر کے کروڑ افراد کو مزید غربت اور افلاس میں دھکیل دیا ہے ۔

ہوم بیسڈ وومن ورکرز فیڈریشن کی جنرل سیکرٹری زہرا خان نے کہا کہ آئی ایم ایف کی ایماءپر بنائی گئی پالیسیوں کے نتیجے میں ملک پہلے ہی بدترین معاشی بحران کا شکار تھا لیکن نااہل حکومت نے اپنے طرز عمل سے اس بحران کو مزید شدید تر کر دیا ہے۔ پچھلے چھ مہینوں میں ساٹھ لاکھ سے زائد محنت کش روزگار سے محروم ہو گئے ہیں جبکہ اندیشہ یہ ہے کہ ایک کروڑ اسی لاکھ سے زائد محنت کش آنے والے دنوں میں بے روزگار ہو جائیں گے۔ صورت حال یہ ہے کہ ملک کی آبادی کا پچاس فیصد سے زائدحصہ خط افلاس سے نیچے زندگی گزرنے پر مجبور ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ محنت کشوں کے اکثر گھرانے بد حالی اور فاقہ کشی کا شکار ہیں جبکہ حکومت تمام تر دعووں کے باووجود وبا سے متاثرہ محنت کشوں کو بروقت اور فوری امداد فراہم کرنے میں مکمل طور پر ناکام رہی ہے ۔

لیاری عوامی محاز کے کنونئیر کامریڈ خالق زدران نے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھر میں بجلی کا بحران شدید سے شدید ترین ہو تا جا رہا ہے ۔ کراچی جیسے ترقی یافتہ شہر کے مکین بارہ سے چودہ گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ کے وجہ سے ذہنی اور جسمانی اذیت کا شکار ہیں۔صورت حال یہ ہے کہ آزادی کے ستر سال گزرنے کے باوجودملک کے سب سے بڑے شہر کے شہری پانی جیسی بنیادی ضرورت سے محروم ہے ۔آج سارا کراچی پانی اور بجلی کی عدم فراہمی کی وجہ سے سراپا احتجاج ہے۔ حکومت نے کراچی کے شہریوں کو کے الیکٹرک اور پانی مافیا کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے ۔

مزدور رہنما عثمان بلوچ نے کہا کہ حکومت کے منافقانہ طرز عمل کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ ایک طرف تو حکومت مزدوروں کے روزگار کو بچانے کے لیے لاک ڈوان کی مخالف ہے جبکہ دوسری جانب تینتالیس سے زائد اداروں کی نجکاری کے زریعے لاکھوں مزدوروں کو بے روزگار کرنے کا منصوبہ بنا رہی ہے ۔ حکومت نے آئی ایم ایف کی ایماءپر عوام پر مزید معاشی بوجھ لادتے ہوئے تمام ریاستی سبسیڈی کو واپس لے لیا ہے۔ حکومت بجلی پیدا کرنے والی کمپنیوں کو واجب الادا کھربوں روپے کا سرکلر قرضہ پارلیمانی بل کے زریعے عوام پر منتقل کرنے کی گھناونی سازش کر رہی ہے ۔

دیگر مزدور رہنماؤں نے مزید کہا کہ ایسے وقت میں جب اپوزیشن کی تمام پارٹیاں زبانی جمع خرچ کے علاوہ کچھ بھی کرنے کے قابل نہیں ہے محنت کش عوام اور سماج کے با شعور حصے کے لیے لازم ہو گیا ہے کہ آئی ایم ایف اور مافیا پر مشتمل اس حکومت کے خاتمہ کے لیے بھر پور جدوجہد کا آغاز کرے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ

۱۔ پیٹرول کی قیمتوں میں کیا گیا تمام اضافہ واپس لیا جائے اور اس جرم میں شریک مافیا کو قانون کے کٹہرے میں کھڑا کیا جائے۔

۲۔ محنت کشوں کی تنخواہوں اور پنشنوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کیا جائے۔

۳۔ تمام برطرف شدہ محنت کشوں بشمول اسٹیل ملز کے محنت کشوںکو بحال کیا جائے۔

۴۔ تینتالیس اداروں کی نجگاری کا فیصلہ واپس لیا جائے۔ ۵۔ کے الیکٹرک عوام کو بنیادی سہولت دینے میں ناکام رہا ہے اس کا کنٹرول فی الفور شہری یا صوبائی حکومت کے حوالے کیا جائے۔

۶۔ کراچی کے لیے پانی کے منصوبوں کو فی الفور پایہ تکمیل تک پہنچایا جائے ۔

۷۔ تمام ہائیڈرنٹس بند کئے جائیں اور شہریوں کو پانی مافیا کے چنگل سے نجات دلائی جائے۔

۸۔ دیگر ممالک کے ساتھ ملکر تمام غیر ملکی قرضوں کی ادائیگی سے انکار کیا جائے ۔

۹۔ تمام شہریوں کو یونیورسل سوشل سیکورٹی سسٹم کے تحت سماجی تحفظ فراہم کیا جائے۔

۱۰۔ میڈیکل اسٹاف کے لیے ہنگامی بنیادوں پر حفاظتی آلات کے علاوہ ٹریننگ کا اہتمام کیا جائے اور ان کی تنخواہوں میں سو فیصد اضافہ کیا جائے۔

مظاہرے سے خطاب کرنے والوں میں نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن سندھ کے صدر گل رحمان، لیبر لیڈر کامریڈ عثمان بلوچ ، جے اینڈ پی کوٹس یونین کے رہنما عاقب حسین ، ایسسٹی ایمپلائز یونین کے گل بخت شاہ، یونائیٹڈ ایچ بی گارمنٹ ورکرز یونین کی جنرل سیکرٹری سائرہ فیروز ، سانحہ بلدیہ ایسوسی ایشن کی رہنما سعیدہ خاتون ، ہوم بیسڈ وومن ورکرز فیڈریشن کی رہنما شبنم اعظم ، روئف ٹیکسٹائل کے جنرل سیکرٹری فاران، طلبہ ایکشن کمیشن کی رہنما کلثوم بلوچ ، پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپین کے رہنما مجید اصغر ، کراچی سندھ سجاگ مزدور فیڈریشن کے رہنما ہمت ، گارمنٹ ٹیکسٹائل جنرل ورکرز یونین کورنگی کے آرگنائزر باسط جاگرانی اور لیاری عوامی محاز کے بارک زیدی, پاکستان فشر فوک فورم کے جنرل سیکرٹری سعید بلوچ، سیسسی آفیسرز ایسوسی ایشن کے وسیم جمال، اسٹیل ملز پروگریسیو لیبر یونین کے جبار خاص خیلی؛ اور سندھ سجاگی مزدور فیڈریشن کے سارنگ شامل تھے۔

پیٹرولیم مصنوعا ت کی قیمتوں میں اضافہ واپس لیا جائے جبری بھرطرفیا ں ختم کی جائے، شہریوں کو بجلی اور پانی فراہم کیا جائے۔

محنت کش عوام اور سماج کے با شعور افراد آئی ایم ایف اور مافیا پر مشتمل اس حکومت کے خاتمہ کے لیے بھر پور جدوجہد کا آغاز کرے۔ احتجاجی مظاہرے سے مزدور رہنماوں کا خطاب

کراچی (پ۔ ر) پیٹرول کی قیمت میں اضافہ، جبری برطرفیاں ، بجلی اور پانی کی عدم فراہمی ثابت کرتیں ہیں کہ ملک پر عوام دشمن مافیا کا مکمل کنٹرول ہے اور انہیں شکست دینے کے لیے ایک بھر پور عوامی تحریک وقت کی اہم ضرورت ہے ۔ ان خیالات کا اظہارنیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن م، ہوم بیسڈ وومن ورکرز فیڈریشن اور دیگر تنظیموں کے زیر اہتمام کراچی پریس کلب پر منعقدہ ریلی میں کیا گیا ۔

یہ احتجاج نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن اور حقوق خلق موومنٹ کی ملک گیر احتجاج اپیل پر منعقد کیا گیا ۔اس احتجاجی مظاہرے میں سینکڑوں کی تعداد میں مزدوروں کے علاوہ سیاسی و سماجی تنظیموں کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔

احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن کے جنرل سیکرٹری ناصر منصور نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نئے سال کابجٹ پاس ہونے سے پہلے ہی حکومت نے مافیا کا تیار کردہ منی بجٹ عوام پر مسلط کر دیا ہے جس کے نتیجے میں مہنگائی کا طوفان اٹھ کھڑا ہوا ہے ۔ حکومت نے قانونی طریقہ کار کو بلاطاق رکھتے ہوئے مجرمانہ انداز میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں پچیس سے ساٹھ فیصد اضافہ کرکے عوام کی جیبوں پر ڈاکہ مارا ہے ۔حکومت میں بیٹھی مافیا نے راتوں رات اربوں روپے کا منافع کمایا ہے ۔چینی آٹا مافیا کی لوٹ مار کے بعد اب پیٹرولیم مافیا حکومتی پش پناہی سے عوام سے تین سو ارب سے زائد کا بھتہ وصول کیا ہے۔

انہو ں نے مزید کہا کہ جہاں ایک طرف حکومت نے اپنی نا عاقبت اندیشن پالیسیوں کی وجہ سے بائیس کروڑ انسانوں کو جان لیواکرونا وائرس کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے وہاں دوسری طرف اس موذی وبا کے خلاف لڑنے والے صحت کے محافظوں کو بغیر ساز و سامان اور حفاظتی اقدامات کے موت کے منہ میں دھکیل دیا ہے ۔اسی انسان دشمن پالیسی کی وجہ سے کئی ایک ڈاکٹرز ، نسرسسزاور پیرا میڈیکل اسٹاف جان بحق ہو چکے ہیں ۔ حکومت کی عوام دشمنی کا ثبوت یہ بھی ہے کہ اس نے موجودہ بجٹ میں صحت اور تعلیم کو مکمل طور پر نظر انداز کر دیا ہے ۔ جبکہ محنت کشوں اور ملازمین کی تنخواہوں اور اجرتوں میںاضافہ نہ کر کے کروڑ افراد کو مزید غربت اور افلاس میں دھکیل دیا ہے ۔

ہوم بیسڈ وومن ورکرز فیڈریشن کی جنرل سیکرٹری زہرا خان نے کہا کہ آئی ایم ایف کی ایماءپر بنائی گئی پالیسیوں کے نتیجے میں ملک پہلے ہی بدترین معاشی بحران کا شکار تھا لیکن نااہل حکومت نے اپنے طرز عمل سے اس بحران کو مزید شدید تر کر دیا ہے۔ پچھلے چھ مہینوں میں ساٹھ لاکھ سے زائد محنت کش روزگار سے محروم ہو گئے ہیں جبکہ اندیشہ یہ ہے کہ ایک کروڑ اسی لاکھ سے زائد محنت کش آنے والے دنوں میں بے روزگار ہو جائیں گے۔ صورت حال یہ ہے کہ ملک کی آبادی کا پچاس فیصد سے زائدحصہ خط افلاس سے نیچے زندگی گزرنے پر مجبور ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ محنت کشوں کے اکثر گھرانے بد حالی اور فاقہ کشی کا شکار ہیں جبکہ حکومت تمام تر دعووں کے باووجود وبا سے متاثرہ محنت کشوں کو بروقت اور فوری امداد فراہم کرنے میں مکمل طور پر ناکام رہی ہے ۔

لیاری عوامی محاز کے کنونئیر کامریڈ خالق زدران نے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھر میں بجلی کا بحران شدید سے شدید ترین ہو تا جا رہا ہے ۔ کراچی جیسے ترقی یافتہ شہر کے مکین بارہ سے چودہ گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ کے وجہ سے ذہنی اور جسمانی اذیت کا شکار ہیں۔صورت حال یہ ہے کہ آزادی کے ستر سال گزرنے کے باوجودملک کے سب سے بڑے شہر کے شہری پانی جیسی بنیادی ضرورت سے محروم ہے ۔آج سارا کراچی پانی اور بجلی کی عدم فراہمی کی وجہ سے سراپا احتجاج ہے۔ حکومت نے کراچی کے شہریوں کو کے الیکٹرک اور پانی مافیا کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے ۔

مزدور رہنما عثمان بلوچ نے کہا کہ حکومت کے منافقانہ طرز عمل کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ ایک طرف تو حکومت مزدوروں کے روزگار کو بچانے کے لیے لاک ڈوان کی مخالف ہے جبکہ دوسری جانب تینتالیس سے زائد اداروں کی نجکاری کے زریعے لاکھوں مزدوروں کو بے روزگار کرنے کا منصوبہ بنا رہی ہے ۔ حکومت نے آئی ایم ایف کی ایماءپر عوام پر مزید معاشی بوجھ لادتے ہوئے تمام ریاستی سبسیڈی کو واپس لے لیا ہے۔ حکومت بجلی پیدا کرنے والی کمپنیوں کو واجب الادا کھربوں روپے کا سرکلر قرضہ پارلیمانی بل کے زریعے عوام پر منتقل کرنے کی گھناونی سازش کر رہی ہے ۔

دیگر مزدور رہنماؤں نے مزید کہا کہ ایسے وقت میں جب اپوزیشن کی تمام پارٹیاں زبانی جمع خرچ کے علاوہ کچھ بھی کرنے کے قابل نہیں ہے محنت کش عوام اور سماج کے با شعور حصے کے لیے لازم ہو گیا ہے کہ آئی ایم ایف اور مافیا پر مشتمل اس حکومت کے خاتمہ کے لیے بھر پور جدوجہد کا آغاز کرے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ

۱۔ پیٹرول کی قیمتوں میں کیا گیا تمام اضافہ واپس لیا جائے اور اس جرم میں شریک مافیا کو قانون کے کٹہرے میں کھڑا کیا جائے۔

۲۔ محنت کشوں کی تنخواہوں اور پنشنوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کیا جائے۔

۳۔ تمام برطرف شدہ محنت کشوں بشمول اسٹیل ملز کے محنت کشوںکو بحال کیا جائے۔

۴۔ تینتالیس اداروں کی نجگاری کا فیصلہ واپس لیا جائے۔ ۵۔ کے الیکٹرک عوام کو بنیادی سہولت دینے میں ناکام رہا ہے اس کا کنٹرول فی الفور شہری یا صوبائی حکومت کے حوالے کیا جائے۔

۶۔ کراچی کے لیے پانی کے منصوبوں کو فی الفور پایہ تکمیل تک پہنچایا جائے ۔

۷۔ تمام ہائیڈرنٹس بند کئے جائیں اور شہریوں کو پانی مافیا کے چنگل سے نجات دلائی جائے۔

۸۔ دیگر ممالک کے ساتھ ملکر تمام غیر ملکی قرضوں کی ادائیگی سے انکار کیا جائے ۔

۹۔ تمام شہریوں کو یونیورسل سوشل سیکورٹی سسٹم کے تحت سماجی تحفظ فراہم کیا جائے۔

۱۰۔ میڈیکل اسٹاف کے لیے ہنگامی بنیادوں پر حفاظتی آلات کے علاوہ ٹریننگ کا اہتمام کیا جائے اور ان کی تنخواہوں میں سو فیصد اضافہ کیا جائے۔

مظاہرے سے خطاب کرنے والوں میں نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن سندھ کے صدر گل رحمان، لیبر لیڈر کامریڈ عثمان بلوچ ، جے اینڈ پی کوٹس یونین کے رہنما عاقب حسین ، ایسسٹی ایمپلائز یونین کے گل بخت شاہ، یونائیٹڈ ایچ بی گارمنٹ ورکرز یونین کی جنرل سیکرٹری سائرہ فیروز ، سانحہ بلدیہ ایسوسی ایشن کی رہنما سعیدہ خاتون ، ہوم بیسڈ وومن ورکرز فیڈریشن کی رہنما شبنم اعظم ، روئف ٹیکسٹائل کے جنرل سیکرٹری فاران، طلبہ ایکشن کمیشن کی رہنما کلثوم بلوچ ، پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپین کے رہنما مجید اصغر ، کراچی سندھ سجاگ مزدور فیڈریشن کے رہنما ہمت ، گارمنٹ ٹیکسٹائل جنرل ورکرز یونین کورنگی کے آرگنائزر باسط جاگرانی اور لیاری عوامی محاز کے بارک زیدی, پاکستان فشر فوک فورم کے جنرل سیکرٹری سعید بلوچ، سیسسی آفیسرز ایسوسی ایشن کے وسیم جمال، اسٹیل ملز پروگریسیو لیبر یونین کے جبار خاص خیلی؛ اور سندھ سجاگی مزدور فیڈریشن کے سارنگ شامل تھے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

www.revanger.com www.erguvanhaber.com www.erzurumozelders.com www.tekirdagtabldot.com www.gebzesaadet.com www.balikesiryenihaber.com www.ucanbalonmugla.com www.aymaras.com www.buyukorduhaber.com www.ambushm.com www.trabzonpostasi.com www.yalovaradyotv.com www.internetedirne.com www.duzcepark.com www.butuncanakkale.com www.ssgolfhotel.com www.ispartaradyonet.com www.tokathaberi.com www.tokathabersitesi.com www.escortlarrize.net www.sivashbr.net www.sivashaberci.com www.manisaotolastik.com www.yeniyasamgorukle.com www.alanyamado.com www.manavgatx.com